وہ وفا و مہر کی داستاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

عرش ملسیانی

وہ وفا و مہر کی داستاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

عرش ملسیانی

MORE BYعرش ملسیانی

    دلچسپ معلومات

    (1951ء)

    وہ وفا و مہر کی داستاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    کبھی تو بھی تھا مرا مہرباں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    ترے لطف خاص نے جو دیا تری یاد نے جو عطا کیا

    غم مستقل غم جاوداں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    وہ جو شور لطف سخن رہا وہ جو زور لطف بیاں رہا

    مرے ہم سخن مرے ہم زباں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    جو ترے لیے مرے دل میں تھا جو مرے لیے ترے دل میں تھا

    مجھے یاد ہے وہ غم نہاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    تری دوستی پہ مرا یقیں مجھے یاد ہے مرے ہم نشیں

    مری دوستی پہ ترا گماں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    وہ کرم شعاریٔ دشمناں وہ ستم طرازیٔ دوستاں

    مرے نکتہ رس مرے نکتہ داں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    وہ جو شاخ گل پہ تھا آشیاں جو تھا وجہ نازش گلستاں

    گری جس پہ برق شرر فشاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    مرے دل کے جذبۂ گرم میں مرے دل کے گوشۂ نرم میں

    تھا ترا مقام کہاں کہاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    اسے مانتا ہوں میں مہرباں ہیں ترے رفیق بہت یہاں

    کبھی میں بھی تھا ترا رازداں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    یہ جو عرشؔ شکوہ طراز ہے جسے ہرزہ گوئی پہ ناز ہے

    یہ وہی ہے شاعر‌ خوش بیاں تجھے یاد ہو کہ نہ یاد ہو

    مأخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Arsh (Pg. 87)
    • Author : Arsh Malsiyani
    • مطبع : Ali Imran Chaudhary

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY