یاد کی بستی کا یوں تو ہر مکاں خالی ہوا

شہرام سرمدی

یاد کی بستی کا یوں تو ہر مکاں خالی ہوا

شہرام سرمدی

MORE BYشہرام سرمدی

    یاد کی بستی کا یوں تو ہر مکاں خالی ہوا

    بس گیا تھا جو خلا سا وہ کہاں خالی ہوا

    رات بھر اک آگ سی جلتی رہی تھی آنکھ میں

    اور پھر دن بھر مسلسل اک دھواں خالی ہوا

    خودبخود اک دشت نے تشکیل پائی اور پھر

    لمحہ بھر میں ایک شہر بیکراں خالی ہوا

    آج جب اس لطف سایہ کی ضرورت تھی ہمیں

    کم نصیبی یہ کہ دست مہرباں خالی ہوا

    رفتہ رفتہ بھر گیا ہر سود سے اپنا بھی جی

    رفتہ رفتہ دل سے احساس زیاں خالی ہوا

    آج سے ہم بھی اکیلے ہو گئے اس بھیڑ میں

    دھیان میں تھا جو بھرا سا آسماں خالی ہوا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY