یار کے بن بہار کیا کیجے

مرزا جواں بخت جہاں دار

یار کے بن بہار کیا کیجے

مرزا جواں بخت جہاں دار

MORE BYمرزا جواں بخت جہاں دار

    یار کے بن بہار کیا کیجے

    گل نہ ہووے تو خار کیا کیجے

    کام میرا تو ہو چلا آخر

    اے مرے کردگار کیا کیجے

    کوئی وعدہ وفا نہیں کرتا

    وہ تغافل شعار کیا کیجے

    مثل آئینہ خود نما میرا

    سب سے ہو ہے دو چار کیا کیجے

    سوز دل میرا مجھ کو دے ہے جلا

    آہ مثل چنار کیا کیجے

    عشق نے کر دیا مجھے مجبور

    اب نہیں اختیار کیا کیجے

    مثل زلف بتاں فسانۂ دل

    ہے طویل اختصار کیا کیجے

    گزری جو دل پہ میرے ہو گزری

    اس کا اب اشتہار کیا کیجے

    دل تو گلچیں ہے تیرے گلشن کا

    لے کے گل رو ہزار کیا کیجے

    وہ تو آتا نہیں ہے میرے پاس

    اے دل بے قرار کیا کیجے

    بے طرح ہے مجھے یہ مشکل عشق

    صاحب ذوالفقار کیا کیجے

    اے جہاں دارؔ سب جہاں ڈھونڈا

    نئیں کوئی غم گسار کیا کیجے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے