یہیں کہیں پہ کبھی شعلہ کار میں بھی تھا

ساقی فاروقی

یہیں کہیں پہ کبھی شعلہ کار میں بھی تھا

ساقی فاروقی

MORE BYساقی فاروقی

    یہیں کہیں پہ کبھی شعلہ کار میں بھی تھا

    شب سیاہ میں اک چشم مار میں بھی تھا

    بہت سے لوگ تھے سقراط کار و عیسیٰ دم

    اسی ہجوم میں اک بے شمار میں بھی تھا

    یہ چاند تارے مرے گرد رقص کرتے تھے

    لکھا ہوا ہے زمیں کا مدار میں بھی تھا

    سنا ہے زندہ ہوں حرص و ہوس کا بندہ ہوں

    ہزار پہلے محبت گزار میں بھی تھا

    جو میرے اشک تھے برگ خزاں کی طرح گرے

    برس کے کھل گیا ابر بہار میں بھی تھا

    وہ بیل بوٹے بنائے کہ دیکھتے رہے لوگ

    یہ ہاتھ کاٹ لیے مینا کار میں بھی تھا

    مجھے سمجھنے کی کوشش نہ کی محبت نے

    یہ اور بات ذرا پیچ دار میں بھی تھا

    سپردگی میں نہ دیکھی تھی تمکنت ایسی

    یہ رنج ہے کہ انا کا شکار میں بھی تھا

    مجھے عزیز تھا ہر ڈوبتا ہوا منظر

    غرض کہ ایک زوال آشکار میں بھی تھا

    مجھے گناہ میں اپنا سراغ ملتا ہے

    وگرنہ پارسا و دین دار میں بھی تھا

    برائے درس اب اطفال شہر آتے ہیں

    حرام کار غنا و قمار میں بھی تھا

    میں کیا بھلا تھا یہ دنیا اگر کمینی تھی

    در کمینگی پہ چوب دار میں بھی تھا

    وہ آسمانی بلا لوٹ کر نہیں آئی

    اسی زمین پر امیدوار میں بھی تھا

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یہیں کہیں پہ کبھی شعلہ کار میں بھی تھا نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY