یک بیک دل سے ترا جلوہ نما ہو جانا

آرزو سہارنپوری

یک بیک دل سے ترا جلوہ نما ہو جانا

آرزو سہارنپوری

MORE BYآرزو سہارنپوری

    یک بیک دل سے ترا جلوہ نما ہو جانا

    وہ مرا حسن کے شعلوں میں فنا ہو جانا

    دیکھ دل کو مرے تو نے نہ اگر دیکھا ہو

    ٹوٹ کر ساز کا محروم صدا ہو جانا

    الاماں کی رسن و دار سے آتی ہے صدا

    کوئی آساں ہے گنہ گار وفا ہو جانا

    مجھ سے ترک گنہ عشق کا تو عہد نہ لے

    کہ میں انسان ہوں ممکن ہے خطا ہو جانا

    لذت عشق کی مضبوط ہوئیں بنیادیں

    آ گیا درد محبت کو دوا ہو جانا

    وہ گرہ بندیٔ تقدیر تصور میں ترے

    وہ تبسم کا ترے عقدہ کشا ہو جانا

    جذبۂ عشق کی یہ شان تلون توبہ

    کبھی درد اور کبھی دست دعا ہو جانا

    آرزوؔ کی قسم اے کوچۂ جاناں تجھ کو

    کس سے سیکھا ترے ذروں نے خدا ہو جانا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY