یقین وعدہ نہیں تاب انتظار نہیں

اختر شیرانی

یقین وعدہ نہیں تاب انتظار نہیں

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    یقین وعدہ نہیں تاب انتظار نہیں

    کسی طرح بھی دل زار کو قرار نہیں

    شبوں کو خواب نہیں خواب کو قرار نہیں

    کہ زیب دوش وہ گیسوئے مشکبار نہیں

    کلی کلی میں سمائی ہے نکہت سلمیٰ

    شمیم حور ہے یہ بوئے نو بہار نہیں

    کہاں کہاں نہ ہوئے ماہ رو جدا مجھ سے

    کہاں کہاں مری امید کا مزار نہیں

    غموں کی فصل ہمیشہ رہی تر و تازہ

    یہ وہ خزاں ہے کہ شرمندۂ بہار نہیں

    بہار آئی ہے ایسے میں تم بھی آ جاؤ

    کہ زندگی کا برنگ گل اعتبار نہیں

    کسی کی زلف پریشاں کا سایۂ رقصاں ہے

    فضا میں بال فشاں ابر نو بہار نہیں

    ستارہ وار وہ پہلو میں آ گئے شب کو

    سحر سے کہہ دو کہ محفل میں آج بار نہیں

    گل فسردہ بھی اک طرفہ حسن رکھتا ہے

    خزاں یہ ہے تو مجھے حسرت بہار نہیں

    ہر ایک جام پہ یہ نغمۂ حزیں ساقی

    کہ اس جوانی فانی کا اعتبار نہیں

    خدا نے بخش دیئے میرے دل کو غم اتنے

    کہ اب میں اپنے گناہوں پہ شرمسار نہیں

    چمن کی چاندنی راتیں ہیں کس قدر ویراں

    کہ اس بہار میں وہ ماہ نو بہار نہیں

    شریک سوز ہیں پروانے شمع کے اخترؔ

    ہمارے دل کا مگر کوئی غم گسار نہیں

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY