یہ حسرتوں کی مری خاک سے نمو کیا ہے

آر پی شوخ

یہ حسرتوں کی مری خاک سے نمو کیا ہے

آر پی شوخ

MORE BYآر پی شوخ

    یہ حسرتوں کی مری خاک سے نمو کیا ہے

    ترے بغیر یہ دنیائے رنگ و بو کیا ہے

    تو یوں بھی ساتھ مرے جاں بہ لب جدائی میں

    وگرنہ یہ جئے جانے کی آرزو کیا ہے

    تمہاری یاد سے بڑھ کر کریں عبادت کیا

    بہے جب آنکھ سے خود ہی تو پھر وضو کیا ہے

    سنبھل کے یوں وہ نئے ہم سفر کے ساتھ چلا

    کبھی نہ اس کو بتایا کہ جستجو کیا ہے

    میں آج اپنے مسیحا سے کٹ کے آیا ہوں

    مرا علاج بتا میرے چارہ جو کیا ہے

    لہو تو وہ کہ بہے جب تو نقش یار بنے

    نہ اپنا رنگ جمائے تو پھر لہو کیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے