یہ کیسے غم نکھارا جا رہا ہے

پونم سوناچھاترا

یہ کیسے غم نکھارا جا رہا ہے

پونم سوناچھاترا

MORE BYپونم سوناچھاترا

    یہ کیسے غم نکھارا جا رہا ہے

    فقط اب دن گزارا جا رہا ہے

    بڑا ہی پیار کرتے ہیں وہ مجھ سے

    بدن یہ کہہ سنوارا جا رہا ہے

    کبھی آپس کبھی گھر اور کبھی تم

    مجھے کشتوں میں مارا جا رہا ہے

    ذرا سا کانپ اٹھے ٹھہرے پربت

    یہ کس کو یوں پکارا جا رہا ہے

    غضب لاشوں پہ کرتے رقص ہیں جو

    وہ کہتے ہیں مدارا جا رہا ہے

    نئے پودے سبھی کو روپنے ہیں

    پرانا دشت وارا جا رہا ہے

    ہوا دیدار مرتے وقت ہمدم

    ترا پونمؔ خسارہ جا رہا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY