یہ کون ہے جو سر روزگار آیا ہے

قمر عباس قمر

یہ کون ہے جو سر روزگار آیا ہے

قمر عباس قمر

MORE BYقمر عباس قمر

    یہ کون ہے جو سر روزگار آیا ہے

    کہا کہ عشق کا پروردگار آیا ہے

    وہ ایک طائر بے پر عذاب میں جل کر

    سب ہجرتوں کی مسافت گزار آیا ہے

    ہمیں نہ وصل کے قصے سناؤ رہنے دو

    ہمارے حق میں فقط انتظار آیا ہے

    جو آیا شہر عدم سے جہان ہستی میں

    یہ واقعہ ہے کہ بے اختیار آیا ہے

    یہ کیا وصال کہ آخر مری محبت پر

    بوقت مرگ اسے اعتبار آیا ہے

    اسے خبر ہی نہیں دل رہ محبت میں

    غم حیات کا صدقہ اتار آیا ہے

    قتیل شوق نظر ہجرتوں کا مارا قمرؔ

    تمہارے شہر سے بس اشک بار آیا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY