یوں تصور میں بسر رات کیا کرتے تھے

شفیق جونپوری

یوں تصور میں بسر رات کیا کرتے تھے

شفیق جونپوری

MORE BYشفیق جونپوری

    یوں تصور میں بسر رات کیا کرتے تھے

    لب نہ کھلتے تھے مگر بات کیا کرتے تھے

    ہائے وہ رات کہ سوتی تھی خدائی ساری

    ہم کسی در پہ مناجات کیا کرتے تھے

    یاد ہے بندگی اہل محبت جس پر

    آپ بھی فخر و مباہات کیا کرتے تھے

    ہم کبھی معتکف کنج حرم ہو کر بھی

    سجدۂ پیر خرابات کیا کرتے تھے

    یاد کرتا ہے اسی عہد گزشتہ کو شفیقؔ

    جب تم الطاف و عنایات کیا کرتے تھے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    یوں تصور میں بسر رات کیا کرتے تھے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY