Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

یوں ہی عمر بھر ترے رنگ و بو سے مرے لہو کی وفا رہے

ارشد عبد الحمید

یوں ہی عمر بھر ترے رنگ و بو سے مرے لہو کی وفا رہے

ارشد عبد الحمید

MORE BYارشد عبد الحمید

    یوں ہی عمر بھر ترے رنگ و بو سے مرے لہو کی وفا رہے

    میں چراغ بن کے جلا کروں تو گلاب بن کے کھلا رہے

    وہ زمین ہو کہ ہو آسماں یہ دیا ہمیشہ جلا رہے

    میں کسی سفر میں رہوں مگر مرے ساتھ ماں کی دعا رہے

    مری کمتری کی بساط ہی تری برتری کی دلیل ہے

    میں نشیب میں نہ رہوں اگر تو فراز تیرا دبا رہے

    نئے زخم ہیں نئی کونپلیں ابھی دل پہ غم کی بہار ہے

    یہ دعا کرو کہ خزاں میں بھی یہ درخت یوں ہی ہرا رہے

    مأخذ :
    • کتاب : Sadaa-e-aabju (Pg. 111)
    • Author : Arshad Abdul Hameed
    • مطبع : Arshad Abdul Hameed (2004)
    • اشاعت : 2004

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے