زباں کو حکم ہی کہاں کہ داستان غم کہیں

شمیم کرہانی

زباں کو حکم ہی کہاں کہ داستان غم کہیں

شمیم کرہانی

MORE BYشمیم کرہانی

    زباں کو حکم ہی کہاں کہ داستان غم کہیں

    ادا ادا سے تم کہو نظر نظر سے ہم کہیں

    جو تم خدا خدا کہو تو ہم صنم صنم کہیں

    کہ ایک ہی سی بات ہے وہ تم کہو کہ ہم کہیں

    ملے ہیں تشنہ میکشوں کو چند جام اس لیے

    کہیں نہ حال تشنگی کہیں تو کم سے کم کہیں

    ستم گران سادہ دل یہ بات جانتے نہیں

    کہ وہ ستم ظریف ہیں ستم کو جو کرم کہیں

    سبو ہو میرے ہاتھ میں تو کاسۂ گداگری

    جو تم اٹھا لو جام تو لوگ جام جم کہیں

    شمیمؔ وہ نہ ساتھ دیں تو مجھ سے طے نہ ہو سکیں

    یہ زندگی کے راستے کہ زلف خم بہ خم کہیں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    شمیم کرہانی

    شمیم کرہانی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY