زمان ہجر مٹے دور وصل یار آئے

اختر شیرانی

زمان ہجر مٹے دور وصل یار آئے

اختر شیرانی

MORE BYاختر شیرانی

    زمان ہجر مٹے دور وصل یار آئے

    الٰہی اب تو خزاں جائے اور بہار آئے

    ستم ظریفیٔ فطرت یہ کیا معمہ ہے

    کہ جس کلی کو بھی سونگھوں میں بوئے یار آئے

    چمن کی ہر کلی آمادۂ تبسم ہے

    بہار بن کے مری جان نو بہار آئے

    ہیں تشنہ کام ہم ان بادلوں سے پوچھے کوئی

    کہاں بہار کی پریوں کے تخت اتار آئے

    ترے خیال کی بے تابیاں معاذ اللہ

    کہ ایک بار بھلائیں تو لاکھ بار آئے

    وہ آئیں یوں مرے آغوش عشق میں اخترؔ

    کہ جیسے آنکھوں میں اک خواب بے قرار آئے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY