زمیں بدلی فلک بدلا مذاق زندگی بدلا

فراق گورکھپوری

زمیں بدلی فلک بدلا مذاق زندگی بدلا

فراق گورکھپوری

MORE BYفراق گورکھپوری

    زمیں بدلی فلک بدلا مذاق زندگی بدلا

    تمدن کے قدیم اقدار بدلے آدمی بدلا

    خدا و اہرمن بدلے وہ ایمان دوئی بدلا

    حدود خیر و شر بدلے مذاق کافری بدلا

    نئے انسان کا جب دور خود نا آگہی بدلا

    رموز بے خودی بدلے تقاضائے‌ خودی بدلا

    بدلتے جا رہے ہیں ہم بھی دنیا کو بدلنے میں

    نہیں بدلی ابھی دنیا تو دنیا کو ابھی بدلا

    نئی منزل کے میر کارواں بھی اور ہوتے ہیں

    پرانے خضر رہ بدلے وہ طرز رہبری بدلا

    کبھی سوچا بھی ہے اے نظم کہنہ کے خداوندو

    تمہارا حشر کیا ہوگا جو یہ عالم کبھی بدلا

    ادھر پچھلے سے اہل‌‌ مال و زر پر رات بھاری ہے

    ادھر بیداری جمہور کا انداز بھی بدلا

    زہے سوز‌ غم آدم خوشا ساز دل آدم

    اسی اک شمع کی لو نے جہان تیرگی بدلا

    نئے منصور ہیں صدیوں پرانے شیخ و قاضی ہیں

    نہ فتوے کفر کے بدلے نہ عذر دار ہی بدلا

    بتائے تو بتائے اس کو تیری شوخئ پنہاں

    تری چشم توجہ ہے کہ طرز بے رخی بدلا

    بہ فیض آدم خاکی زمیں سونا اگلتی ہے

    اسی ذرے نے دور مہر و ماہ و مشتری بدلا

    ستارے جاگتے ہیں رات لٹ چھٹکائے سوتی ہے

    دبے پاؤں کسی نے آ کے خواب زندگی بدلا

    فراقؔ ہمنوائے‌‌ میرؔ و غالبؔ اب نئے نغمے

    وہ بزم زندگی بدلی وہ رنگ شاعری بدلا

    مأخذ :
    • کتاب : Gul-e-Naghma (Pg. 19)
    • Author : Firaq Gorakhpuri
    • مطبع : Idarah idarah ilm-o-adab, Delhi (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY