زمیں ہوگی کسی قاتل کا داماں ہم نہ کہتے تھے

جاں نثاراختر

زمیں ہوگی کسی قاتل کا داماں ہم نہ کہتے تھے

جاں نثاراختر

MORE BY جاں نثاراختر

    زمیں ہوگی کسی قاتل کا داماں ہم نہ کہتے تھے

    اکارت جائے گا خون شہیداں ہم نہ کہتے تھے

    علاج چاک پیراہن ہوا تو اس طرح ہوگا

    سیا جائے گا کانٹوں سے گریباں ہم نہ کہتے تھے

    ترانے کچھ دئیے لفظوں میں خود کو قید کر لیں گے

    عجب انداز سے پھیلے گا زنداں ہم نہ کہتے تھے

    کوئی اتنا نہ ہوگا لاش بھی لے جا کے دفنا دے

    انہیں سڑکوں پہ مر جائے گا انساں ہم نہ کہتے تھے

    نظر لپٹی ہے شعلوں میں لہو تپتا ہے آنکھوں میں

    اٹھا ہی چاہتا ہے کوئی طوفاں ہم نہ کہتے تھے

    چھلکتے جام میں بھیگی ہوئی آنکھیں اتر آئیں

    ستائے گی کسی دن یاد یاراں ہم نہ کہتے تھے

    نئی تہذیب کیسے لکھنؤ کو راس آئے گی

    اجڑ جائے گا یہ شہر غزالاں ہم نہ کہتے تھے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    زمیں ہوگی کسی قاتل کا داماں ہم نہ کہتے تھے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites