Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

زرد پتوں کو درختوں سے جدا ہونا ہی تھا

نجیب احمد

زرد پتوں کو درختوں سے جدا ہونا ہی تھا

نجیب احمد

MORE BYنجیب احمد

    زرد پتوں کو درختوں سے جدا ہونا ہی تھا

    ہم کہ دریا ہیں سمندر کی غذا ہونا ہی تھا

    اور کب تک بے ثمر رکھتی خزاں پیڑوں کے ہاتھ

    رت بدل جانا تھی یہ جنگل ہرا ہونا ہی تھا

    روکنے سے کب ہوا کے نرم جھونکے رک سکے

    بند دروازوں کو اک دن نیم وا ہونا ہی تھا

    دھول کب تک جھونکے اک دوسرے کی آنکھ میں

    ایک دن تو جھوٹ سچ کا فیصلہ ہونا ہی تھا

    تیز دھاروں سے بچھڑ کر ان کناروں پر نجیبؔ

    موج دریا کی طرح بے دست و پا ہونا ہی تھا

    مأخذ :
    • کتاب : Muasir (Pg. 226)
    • Author : Habibullah
    • مطبع : Maktaba muasir 304 alfaisal palaza, Shahrah qaid-e-azam, lahore

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے