ذہن کی قید سے آزاد کیا جائے اسے

سالم سلیم

ذہن کی قید سے آزاد کیا جائے اسے

سالم سلیم

MORE BYسالم سلیم

    ذہن کی قید سے آزاد کیا جائے اسے

    جس کو پانا نہیں کیا یاد کیا جائے اسے

    تنگ ہے روح کی خاطر جو یہ ویرانۂ جسم

    تم کہو تو عدم آباد کیا جائے اسے

    زندگی نے جو کہیں کا نہیں رکھا مجھ کو

    اب مجھے ضد ہے کہ برباد کیا جائے اسے

    یہ مرا سینۂ خالی چھلک اٹھے گا ابھی

    میرے اندر اگر ایجاد کیا جائے اسے

    وہ گلی پوچھتی ہے در بدری کے احوال

    ہاں تو پھر واقف روداد کیا جائے اسے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    سالم سلیم

    سالم سلیم

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY