ذہن پر چھا گئی موت کی بے حسی نیند آنے لگی

جمیل الدین عالی

ذہن پر چھا گئی موت کی بے حسی نیند آنے لگی

جمیل الدین عالی

MORE BYجمیل الدین عالی

    ذہن پر چھا گئی موت کی بے حسی نیند آنے لگی

    ڈھونڈھتا ہوں اندھیروں میں آسودگی نیند آنے لگی

    بھاگتے بھاگتے موت کے سائے سے خود ہی دھندلا گئے

    سوچتے سوچتے زندگی زندگی نیند آنے لگی

    ہیں اسی عہد میں سو تصور حسیں کوئی اپنا نہیں

    تھک گئی ہے مرے شوق کی سادگی نیند آنے لگی

    ختم ہیں روز و شب کی پریشانیاں اور حیرانیاں

    تھی وہ کیا شے جو اب تک نہیں مل سکی نیند آنے لگی

    حیرت انگیز رنگوں میں لپٹی ہوئی مضطرب نغمگی

    آج تک اپنی لے میں نہیں ڈھل سکی نیند آنے لگی

    حوصلوں کا ہی انجام ہیں تجربے بس بھرے

    آشتی آشتی آشتی آشتی نیند آنے لگی

    کیا ملا نغم و رنگ کے شوق سے شعر کے ذوق سے

    اک چبھن اک دکھن ایک واماندگی نیند آنے لگی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY