زندگی احسان ہی سے ماورا تھی میں نہ تھا

رؤف خیر

زندگی احسان ہی سے ماورا تھی میں نہ تھا

رؤف خیر

MORE BYرؤف خیر

    زندگی احسان ہی سے ماورا تھی میں نہ تھا

    طاق پر رکھی ہوئی میری دوا تھی میں نہ تھا

    میری ہستی آئینہ تھی یا شکست آئینہ

    بات اتنی سی نہ سمجھے میرے ساتھی میں نہ تھا

    تو ہی تو سب کچھ سہی نا چیز یہ اب کچھ سہی

    وہ تو میری ابتدا بے انتہا تھی میں نہ تھا

    دیکھتا رہتا ہوں منظر دیدنی نا دیدنی

    ہاں مگر حیران چشم ماسوا تھی میں نہ تھا

    تو مجھے دشمن سمجھتا ہے تو دشمن ہی سہی

    تو بھی واقف ہے کوئی نادان ساتھی میں نہ تھا

    میرے اندر کا درندہ کھا رہا تھا پیچ و تاب

    اور پھر شائستگی زنجیر پا تھی میں نہ تھا

    خیر اب تو چیونٹی بھی دوڑتی ہے کاٹنے

    جھولتے تھے جب کہ دروازے پہ ہاتھی میں نہ تھا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY