Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر

زندگی گزری ہے تنہا عمر بھر

ارشاد عزیز

زندگی گزری ہے تنہا عمر بھر

ارشاد عزیز

MORE BYارشاد عزیز

    زندگی گزری ہے تنہا عمر بھر

    میں رہا مر مر کے زندہ عمر بھر

    وہ کسی کی ہو گئی منزل تو کیا

    اس کا دیکھا میں نے رستا عمر بھر

    عشق دھوکا ہے سراسر با خدا

    میں نے کھایا ہے یہ دھوکا عمر بھر

    بھول ہی بیٹھے ہم اپنے آپ کو

    بس اسے ہی ہم نے سوچا عمر بھر

    یاد بھی کرتا نہیں ہوں میں جنہیں

    کرتے آئے میرا چرچا عمر بھر

    کہہ نہ پائے بات دل کی آج تک

    مل نہیں پایا وہ تنہا عمر بھر

    وہ کرم کر دے تو ہے اس کی رضا

    کر نہ پائے ایک سجدہ عمر بھر

    اک صفر ہی رہ گیا ہوں اب تو بس

    سب پہ میں نے خود کو خرچا عمر بھر

    تیرے میرے میں ہی پھنس کر رہ گئے

    ہو نہ پایا کوئی اپنا عمر بھر

    مأخذ :
    • کتاب : آہٹ دیوان عزیز (Pg. 131)
    • Author : ارشاد عزیز
    • مطبع : مرکزی پبلیکیشنز،نئی دہلی (2022)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

    GET YOUR PASS
    بولیے