زندگی مرگ کی مہلت ہی سہی

قلق میرٹھی

زندگی مرگ کی مہلت ہی سہی

قلق میرٹھی

MORE BY قلق میرٹھی

    زندگی مرگ کی مہلت ہی سہی

    بہر واماندہ اقامت ہی سہی

    دوستی وجہ عداوت ہی سہی

    دشمنی بہر رفاقت ہی سہی

    طول دیتے ہو عداوت کو کیوں

    مختصر قصۂ الفت ہی سہی

    رکھ کسی وضع سے احسان کی خو

    مجھ کو آزار سے راحت ہی سہی

    آپ کا بھی نہیں چھٹتا دامن

    میرے در پہ مری شامت ہی سہی

    عاقبت حشر کو آنا اک دن

    روٹھ جانا تری عادت ہی سہی

    کچھ بھی اے بخت میسر ہے تجھے

    یا تجسس سے فراغت ہی سہی

    کوچۂ غیر میں چل کر رہیے

    گر نہیں عیش تو حسرت ہی سہی

    یہی تقریب ستم ہو اے کاش

    ہر طرح غیر سے نفرت ہی سہی

    اب تو اٹھ آئے لحد سے بے تاب

    نہ سہی چال قیامت ہی سہی

    یادگاری کی کوئی بات تو ہو

    موت اپنی تری رخصت ہی سہی

    عدل و انصاف قیامت معلوم

    آہ و فریاد کی فرصت ہی سہی

    اے قلقؔ شکر ستم بے جا کیوں

    آہ و فریاد کی فرصت ہی سہی

    مآخذ:

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY