زندگی موت کے پہلو میں بھلی لگتی ہے

سلیم احمد

زندگی موت کے پہلو میں بھلی لگتی ہے

سلیم احمد

MORE BYسلیم احمد

    زندگی موت کے پہلو میں بھلی لگتی ہے

    گھاس اس قبر پہ کچھ اور ہری لگتی ہے

    روز کاغذ پہ بناتا ہوں میں قدموں کے نقوش

    کوئی چلتا نہیں اور ہم سفری لگتی ہے

    آنکھ مانوس تماشا نہیں ہونے پاتی

    کیسی صورت ہے کہ ہر روز نئی لگتی ہے

    گھاس میں جذب ہوئے ہوں گے زمیں کے آنسو

    پاؤں رکھتا ہوں تو ہلکی سی نمی لگتی ہے

    سچ تو کہہ دوں مگر اس دور کے انسانوں کو

    بات جو دل سے نکلتی ہے بری لگتی ہے

    میرے شیشے میں اتر آئی ہے جو شام فراق

    وہ کسی شہر نگاراں کی پری لگتی ہے

    بوند بھر اشک بھی ٹپکا نہ کسی کے غم میں

    آج ہر آنکھ کوئی ابر تہی لگتی ہے

    شور طفلاں بھی نہیں ہے نہ رقیبوں کا ہجوم

    لوٹ آؤ یہ کوئی اور گلی لگتی ہے

    گھر میں کچھ کم ہے یہ احساس بھی ہوتا ہے سلیمؔ

    یہ بھی کھلتا نہیں کس شے کی کمی لگتی ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    زندگی موت کے پہلو میں بھلی لگتی ہے نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY