ظلم سے درگزر نہیں آتا

حسان عارفی

ظلم سے درگزر نہیں آتا

حسان عارفی

MORE BYحسان عارفی

    ظلم سے درگزر نہیں آتا

    ہاں مجھے یہ ہنر نہیں آتا

    جب تلک میرے سر نہیں آتا

    ان کا الزام بر نہیں آتا

    تب فلک پر قمر نہیں آتا

    یار جب بام پر نہیں آتا

    فرق زیر و زبر نہیں آتا

    مجھ کو کچھ بھی نظر نہیں آتا

    ہجرتوں کی اندھیری راہوں میں

    چلتا جاتا ہوں گھر نہیں آتا

    چشم نرگس اداس رہتی ہے

    اب کوئی دیدہ ور نہیں آتا

    بات میں صاف صاف کرتا ہوں

    مجھ کو یہ گر مگر نہیں آتا

    زندگی اتنی دیر مہلت دے

    جب تلک نامہ بر نہیں آتا

    جانے کب سے ہوں منتظر اس کا

    پر مرا منتظر نہیں آتا

    عشق دیتا ہے خود خبر اپنی

    لے کے قاصد خبر نہیں آتا

    عمر بھی لوٹ کر نہیں آتی

    وقت بھی لوٹ کر نہیں آتا

    پھر نہ مل پاؤں گا زمانے سے

    یاد خود کو اگر نہیں آتا

    روشنی سے بنے جو ہوتے ہیں

    ان کا سایہ نظر نہیں آتا

    وقت وہ میہمان ہے حسانؔ

    جو کبھی لوٹ کر نہیں آتا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے