ظلمت کدے میں میرے شب غم کا جوش ہے

مرزا غالب

ظلمت کدے میں میرے شب غم کا جوش ہے

مرزا غالب

MORE BYمرزا غالب

    ظلمت کدے میں میرے شب غم کا جوش ہے

    اک شمع ہے دلیل سحر سو خموش ہے

    نے مژدۂ وصال نہ نظارہ جمال

    مدت ہوئی کہ آشتی چشم و گوش ہے

    مے نے کیا ہے حسن خود آرا کو بے حجاب

    اے شوق! ہاں اجازت تسلیم ہوش ہے

    گوہر کو عقد گردن خوباں میں دیکھنا

    کیا اوج پر ستارۂ گوہر فروش ہے

    دیدار بادہ حوصلہ ساقی نگاہ مست

    بزم خیال مے کدۂ بے خروش ہے

    اے تازہ واردان بساط ہوائے دل

    زنہار اگر تمہیں ہوس نائے و نوش ہے

    دیکھو مجھے جو دیدۂ عبرت نگاہ ہو

    میری سنو جو گوش نصیحت نیوش ہے

    ساقی بہ جلوہ دشمن ایمان و آگہی

    مطرب بہ نغمہ رہزن تمکین و ہوش ہے

    یا شب کو دیکھتے تھے کہ ہر گوشۂ بساط

    دامان باغبان و کف گل فروش ہے

    لطف خرام ساقی و ذوق صدائے چنگ

    یہ جنت نگاہ وہ فردوس گوش ہے

    یا صبح دم جو دیکھیے آ کر تو بزم میں

    نے وہ سرور و سوز نہ جوش و خروش ہے

    داغ فراق صحبت شب کی جلی ہوئی

    اک شمع رہ گئی ہے سو وہ بھی خموش ہے

    آتے ہیں غیب سے یہ مضامیں خیال میں

    غالبؔ صریر خامہ نوائے سروش ہے

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    محمد رفیع

    محمد رفیع

    شیلی کپور

    شیلی کپور

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY