کچھ دنوں سے میرا آئینہ مجھے اچھا لگے

سوہن راہی

کچھ دنوں سے میرا آئینہ مجھے اچھا لگے

سوہن راہی

MORE BY سوہن راہی

    کچھ دنوں سے میرا آئینہ مجھے اچھا لگے

    جب اسے دیکھوں مرا چہرا ترا چہرا لگے

    تیرے ہر اک بول میں سمٹی ہے ایسے رس کتھا

    تیرا جھوٹا قول بھی اب تو مجھے سچا لگے

    تیرے نینوں کے گگن کا میں کبھی پنچھی بنوں

    مکھ ترا چندا کبھی سورج کبھی تارا لگے

    زندگی کے شور جنگل میں دکھی کی راگنی

    ساتھ ہو جائے ترا تو رس بھرا نغمہ لگے

    ایسے کاجل کی لکیروں نے سمیٹا رین کو

    اب اندھیرا بھی مجھے اچھا لگے اجلا لگے

    بن کہے اور بن سنے جو روٹھ جائے تو کبھی

    سانس تو چلتی رہے جینا مگر جھوٹا لگے

    پیار کی بازی میں راہیؔ ہار ہی تو جیت ہے

    زندگی میری جو مٹی تھی وہ اب سونا لگے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY