اٹھی نہیں ہے شہر سے رسم وفا ابھی

دلاور فگار

اٹھی نہیں ہے شہر سے رسم وفا ابھی

دلاور فگار

MORE BYدلاور فگار

    اٹھی نہیں ہے شہر سے رسم وفا ابھی

    بزم سخن کے صدر ہیں ہاشمؔ رضا ابھی

    صاحب یہ چاہتے ہیں میں ہر حکم پر کہوں

    بہتر درست خوب مناسب بجا ابھی

    اس در پہ مجھ کو دیکھ کے درباں نے یہ کہا

    ٹھہرو کہ ہونے والی ہی ہے فاتحا ابھی

    اس طرح میں غزل کوئی دشوار تو نہیں

    دو چار لفظ لکھ دئیے پھر لکھ دیا ابھی

    پھر چند لفظ لکھ دئیے پھر گول ہو گئے

    پھر قافیے سے باندھ کے چپکا دیا ابھی

    پکڑی گئی ردیف تو فوراً یہ کہہ دیا

    لکھنا کبھی تھا اور میں یہاں لکھ گیا ابھی

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    اٹھی نہیں ہے شہر سے رسم وفا ابھی نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY