بن آئی تیری شفاعت سے رو سیاہوں کی

امیر مینائی

بن آئی تیری شفاعت سے رو سیاہوں کی

امیر مینائی

MORE BYامیر مینائی

    بن آئی تیری شفاعت سے رو سیاہوں کی

    کہ فرد داخل دفتر ہوئی گناہوں کی

    ترے فقیر دکھائیں جو مرتبہ اپنا

    نظر سے اترے چڑھی بارگاہ شاہوں کی

    ذرا بھی چشم کرم ہو تو لے اڑیں حوریں

    سمجھ کے سرمہ سیاہی مرے گناہوں کی

    خوشا نصیب جو تیری گلی میں دفن ہوئے

    جناں میں روحیں ہیں ان مغفرت پناہوں کی

    فرشتے کرتے ہیں دامان زلف حور سے صاف

    جو گرد پڑتی ہے اس روضے پر نگاہوں کی

    رکے گی آ کے شفاعت تری خریداری

    کھلیں گی حشر میں جب گٹھڑیاں گناہوں کی

    میں ناتوان ہوں پہنچوں گا آپ تک کیونکر

    کہ بھیڑ ہوگی قیامت میں عذر خواہوں کی

    نگاہ لطف ہے لازم کہ دور ہو یہ مرض

    دبا رہی ہے سیاہی مجھے گناہوں کی

    خدا کریم محمد شفیع روز جزا

    امیرؔ کیا ہے حقیقت مرے گناہوں کی

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے