میرا سفر

علی سردار جعفری

میرا سفر

علی سردار جعفری

MORE BY علی سردار جعفری

    ''ہمچو سبزہ بارہا روئیدہ ایم''

    (رومیؔ)

    My Voyage

    پھر اک دن ایسا آئے گا

    آنکھوں کے دئیے بجھ جائیں گے

    ہاتھوں کے کنول کمھلائیں گے

    اور برگ زباں سے نطق و صدا

    کی ہر تتلی اڑ جائے گی

    اک کالے سمندر کی تہ میں

    کلیوں کی طرح سے کھلتی ہوئی

    پھولوں کی طرح سے ہنستی ہوئی

    ساری شکلیں کھو جائیں گی

    خوں کی گردش دل کی دھڑکن

    سب راگنیاں سو جائیں گی

    اور نیلی فضا کی مخمل پر

    ہنستی ہوئی ہیرے کی یہ کنی

    یہ میری جنت میری زمیں

    اس کی صبحیں اس کی شامیں

    بے جانے ہوئے بے سمجھے ہوئے

    اک مشت غبار انساں پر

    شبنم کی طرح رو جائیں گی

    ہر چیز بھلا دی جائے گی

    یادوں کے حسیں بت خانے سے

    ہر چیز اٹھا دی جائے گی

    پھر کوئی نہیں یہ پوچھے گا

    سردارؔ کہاں ہے محفل میں

    ‘Like grass, I've sprouted again and again.'

    -Rumi

    One such day will come again

    When stars in eyes are extinguished

    When lotuses in hands are wilted

    And from tongue's leaf

    The butterfly of sound ’n speech will fly away.

    In the depths of a dark ocean

    Blooming like buds

    Laughing like flowers

    All faces will disappear.

    Blood flow, heart beat

    All melodies will go to sleep

    And on the velvet blue air

    This twinkling diamond sliver

    My earth, my paradise

    Its mornings, its evenings

    Without knowing, without understanding

    Will weep, dew-like

    On a fistful of dust that is man.

    All things will be forgotten

    From the beautiful temple of memories

    All things will be removed

    Then no one will ever ask

    Where has Sardar gone?

    But I'll come here again

    I'll speak through children's mouths

    I'll sing in songs of birds

    When seeds will smile in the earth

    And tips of shoots

    Will tease layers of soil

    In every leaf, in every bud

    I'll open my eyes.

    On my green palms

    I'll collect drops of dew

    Like colour of henna, the rhythm of the ghazal

    I'll become the manner of speech

    Like the face of a new bride

    I'll shine through every veil.

    When wintry breezes bring

    Autumn season to our valley

    Beneath the feet of young travellers

    In the crunching of dried leaves

    Echoes of my laughter will float.

    All golden streams of earth

    All the blue lakes of sky

    Will be filled with my being

    And the whole world will see

    That every story is my story

    Every lover here is Sardar

    And every beloved is Sultana.

    I am a fleeting moment

    In the magic house of time

    I'm a restive water-bead

    Forever busy travelling

    From the heart of past's wine jug

    To the goblet of the future

    I sleep, I wake

    And slumber once again

    For centuries I'm in play

    Death makes me immortal.

    لیکن میں یہاں پھر آؤں گا

    بچوں کے دہن سے بولوں گا

    چڑیوں کی زباں سے گاؤں گا

    جب بیج ہنسیں گے دھرتی میں

    اور کونپلیں اپنی انگلی سے

    مٹی کی تہوں کو چھیڑیں گی

    میں پتی پتی کلی کلی

    اپنی آنکھیں پھر کھولوں گا

    سر سبز ہتھیلی پر لے کر

    شبنم کے قطرے تولوں گا

    میں رنگ حنا آہنگ غزل

    انداز سخن بن جاؤں گا

    رخسار عروس نو کی طرح

    ہر آنچل سے چھن جاؤں گا

    جاڑوں کی ہوائیں دامن میں

    جب فصل خزاں کو لائیں گی

    رہ رو کے جواں قدموں کے تلے

    سوکھے ہوئے پتوں سے میرے

    ہنسنے کی صدائیں آئیں گی

    دھرتی کی سنہری سب ندیاں

    آکاش کی نیلی سب جھیلیں

    ہستی سے مری بھر جائیں گی

    اور سارا زمانہ دیکھے گا

    ہر قصہ مرا افسانہ ہے

    ہر عاشق ہے سردارؔ یہاں

    ہر معشوقہ سلطانہؔ ہے

    میں ایک گریزاں لمحہ ہوں

    ایام کے افسوں خانے میں

    میں ایک تڑپتا قطرہ ہوں

    مصروف سفر جو رہتا ہے

    ماضی کی صراحی کے دل سے

    مستقبل کے پیمانے میں

    میں سوتا ہوں اور جاگتا ہوں

    اور جاگ کے پھر سو جاتا ہوں

    صدیوں کا پرانا کھیل ہوں میں

    میں مر کے امر ہو جاتا ہوں

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    علی سردار جعفری

    علی سردار جعفری

    RECITATIONS

    علی سردار جعفری

    علی سردار جعفری

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    علی سردار جعفری

    میرا سفر علی سردار جعفری

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Added to your favorites

    Removed from your favorites