آب و گل

شاذ تمکنت

آب و گل

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    مجھے یاد پڑتا ہے اک عمر گزری

    لگاوٹ کی شبنم میں لہجہ ڈبو کر

    کوئی مجھ کو آواز دیتا تھا اکثر

    بلاوے کی معصومیت کے سہارے

    میں آہستہ آہستہ پہنچا یہاں تک

    بہ ہر سمت انبوہ آوارگاں تھا

    بڑے چاؤ سے میں نے اک اک سے پوچھا

    ''کہو کیا تم ہی نے پکارا تھا مجھ کو

    کہو کیا تم ہی نے پکارا تھا مجھ کو''

    مگر مجھ سے انبوہ آوارگاں نے

    ہراساں ہراساں پریشاں پریشاں

    کہا صرف اتنا ''نہیں وہ نہیں ہم

    ہمیں بھی بلا کر کوئی چھپ گیا ہے''

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    آب و گل نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY