ابھی اس کی ضرورت تھی

عباس تابش

ابھی اس کی ضرورت تھی

عباس تابش

MORE BYعباس تابش

    INTERESTING FACT

    (فیضؔ_صاحب کے انتقال پر)

    صف ماتم بچھی ہے

    سخن کا آخری در بند ہونے کی خبر نے

    کھڑکیوں کے پار بیٹھے غمگساروں کو

    یہ کیسی چپ لگا دی ہے

    یہ کس کی ناگہانی موت پر سرگوشیوں کی آگ روشن ہے

    کسی کے کنج لب سے کوئی تارا میرے دل پر آن پڑتا ہے

    برا ہو موت کا جس نے مرے فریاد رس کی جان لے لی ہے

    ابھی اس کی ضرورت تھی

    میں اس دنیا کے اک گوشے میں بیٹھا سوچتا ہوں

    آج اس ویران منڈلی میں

    میں کس کو پرسہ دینے کے لیے آیا ہوں

    مجھ کو تعزیت تو خود سے کرنا تھی

    ابھی اس گھر سے اک میت سدھاری ہے

    دم رخصت

    کسی نے نکہت زلف پریشاں کا نہیں پوچھا

    کسی نے دکھ کے اندر روشنی کی چھب نہیں دیکھی

    مکاں سے پھوٹنے والی روش پر

    ایک بچہ رو رہا ہے

    آج اس کے آنسوؤں کو کون پونچھے گا

    کہ اس کے ساتھ جو شطرنج کی بازی لگاتا تھا

    وہ اب زیر زمیں اک چادر سادہ کی خوشبو ہے

    یہاں صبحیں بھی آئیں گی

    یہاں شامیں بھی اتریں گی

    مگر اک ہچکیاں لیتا ہوا بچہ

    چراغ آرزو بن کر

    سر طاق لحد گونگی زمیں کی لب کشائی تک پکارے گا

    برا ہو موت کا جس نے مرے فریاد رس کی جان لے لی ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Ishq Abaad (kulliyat) (Pg. 156)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY