اے روح زندگی

محمد حنیف رامے

اے روح زندگی

محمد حنیف رامے

MORE BY محمد حنیف رامے

    اے روح زندگی

    اے خدا کی قوت تخلیق

    کون سی نئی دنیائیں آباد کرنے میں مصروف ہو گئی ہے تو

    اس ہماری دنیا کی جانب بھی پلٹ کر دیکھ

    جو لمحہ بہ لمحہ ویران سے ویران تر ہوتی جا رہی ہے

    اے روح زندگی

    اے اولین روشنی کی ابدی لو

    موت کے اندھیروں کو چیرتی ہوئی آ

    دیکھ میں بازو کھولے کھڑا ہوں

    آ اور اپنی لپیٹ میں لے لے مجھے

    میری آنکھوں سے دیکھ

    میرے ذہن سے سوچ

    میرے خوابوں میں اتر کر مخلوق خدا کی آرزوؤں کا اندازہ کر

    میرے دل میں پڑاؤ کر

    اس کے شکستہ آئینے میں ہماری حالت دیکھ

    اور نغمہ چھیڑ

    جو کمزوروں کی ٹوٹی ہوئی ہمت کو از سر نو جوان کر دے

    وہ صور پھونک

    جو ظالموں کے دست و بازو کو توڑ کر رکھ دے

    وہ آہ بھر جو فاقوں مرتی مخلوق پر رزق کی بارش بن کر برس جائے

    وہ صدا کر

    جو نیت کے فتور کو حسن خیال میں

    اور نتیجے کی اذیت کو حسن عمل میں بدل دے

    اے روح زندگی

    اے خدا کی قوت اظہار

    میری دنیا میں تیرے رنگ پھیکے پڑ گئے ہیں

    دیکھ اربوں انسان جیتے جی مر رہے ہیں

    نا انصافی بد امنی مایوسی بیماری اور جہالت نے

    تیری تصویر میں موت کے رنگ بھرنے شروع کر دیے ہیں

    آ، اور بول میرے اندر سے

    آ میرا کلام بن جا بیان بن جا میرا قلم بن جا مو قلم بن جا

    آ، انصاف امن اور آزادی کو ترسے ہوؤں کی امید بن جا

    آ، دوستی محبت اور برابری سے محروم مخلوق کی ڈھارس بندھانے آ

    آ، اور جلدی آ

    کہ تجھے پکارتے پکارتے کہیں میں ہاتھ توڑ کر نہ بیٹھ جاؤں

    مآخذ:

    • کتاب : din kaa phool (Pg. 149)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY