اپنے قاتل کے لیے ایک نظم

نصیر احمد ناصر

اپنے قاتل کے لیے ایک نظم

نصیر احمد ناصر

MORE BY نصیر احمد ناصر

    اگر میرے سینے میں خنجر اتارو

    تو یہ سوچ لینا

    ہوا کا کوئی جسم ہوتا نہیں ہے

    ہوا تو روانی ہے

    عمروں کے بہتے سمندر کی

    لمبی کہانی ہے

    آغاز جس کا نہ انجام جس کا

    اگر میرے سینے میں خنجر اتارو

    تو یہ سوچ لینا

    ہوا موت سے ماورا ہے

    ہوا ماں کے ہاتھوں کی تھپکی

    ہوا لوریوں کی صدا ہے

    ہوا ننھے بچوں کے ہونٹوں سے

    نکلی دعا ہے

    مآخذ:

    • کتاب : Pakistani Adab (Pg. 239)
    • Author : Dr. Rashid Amjad
    • مطبع : Pakistan Academy of Letters, Islambad, Pakistan (2009)
    • اشاعت : 2009

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY