بارش کی نظم

اسعد بدایونی

بارش کی نظم

اسعد بدایونی

MORE BY اسعد بدایونی

    یہ منحوس بارش

    جواں سال گیہوں کے دانوں کو

    کیچڑ کا حصہ بنانے

    مرے گاؤں میں ہر برس کی طرح

    آج پھر آ گئی ہے

    وہ گیہوں کے خوشے جو کھلیان میں

    دھوپ کے دیوتا کی عبادت میں

    مصروف تھے

    ان کو بارش نے آغوش میں لے لیا ہے

    ہر اک کھیت میں کتنا پانی بھرا ہے

    بھوک اپنی مٹا کر

    یہ بارش چلی جائے گی

    اور سب کھیت خالی کے خالی رہیں گے

    میں نے بارش کے چہرے پہ لکھا ہر اک واقعہ

    پڑھ لیا ہے

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بارش کی نظم نعمان شوق

    Tagged Under

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY