باز گشت

MORE BYشفیق فاطمہ شعریٰ

    نغمہ زار درد کی جانب چلے ہم

    ایک بھی ذرہ نہ کچلا جائے اس رفتار سے

    نغمہ زار درد کی جانب چلے ہم

    کنج میں پیڑوں کے سورج جھانکتا تھا

    کوہساروں سبزہ زاروں میں جھمکتی روشنی کا جشن تھا

    جشن جاری ہی رہے گا تا ابد

    جاری رہے

    نغمہ زار درد کی جانب چلے ہم

    لعل و مرمر سے گندھا قالب

    اور اس کے محور اس کے قریب

    بجلیوں جیسا مصفا اک وجود

    چار سو بکھرے ہوئے خاموش سونے آسماں

    ہم کہاں ہیں ہم کہاں نغمہ زار درد ہے یہ ہم کہاں

    اتنا بے آواز جیسے

    آتما اپنی شعاعیں

    ریشے ریشے سے بدن کے کھینچ لے

    آہستگی سے بے گزند

    اور دوری بے فغاں ہو جسم کی اور روح کی

    کیا سبک رفتار کر دیتی ہے ہم کو بے دلی بے حاصلی

    جیسے اک بادل کا ٹکڑا

    اپنی چھاگل پھینک دے اونچی فضا میں

    پیاسے ذروں کی طرف

    پھر ہلکے پھلکے پنکھ پھیلائے اڑے

    ہلکورے لے

    اک مٹتی بنتی رنگ کی تحریر سی

    سیراب ذرے اس کو دیکھیں

    اور پکار اٹھیں

    وہ کافوری سا شعلہ عظمت نا رس

    دوام درد ہے وہ سرخ نرمل روشنی

    لو سانس کے سرچشمے سوکھے ہر شکایت مٹ گئی

    کیا شکایت سانس کے سر چشمہ سے ان کو رہی

    جو سانس لیتے ہیں یہاں

    موج بے ہنگام خندہ

    کیسے پھوٹی میرے لب سے

    کوئی شکتی ہم میں ہے

    جو یوں ہمیں پامال کر ہنس سکے

    یہ ہمیں آغاز ہی سے ختم کرنے پر تلی تھی

    چاہے پھر خود ہی مجاور بن سکے انجام کار

    احتجاج اس کا جو اک شکتی ہے مجھ میں

    کس قدر پر شور ہے

    کس قدر پر زور ہے

    نغمہ زار درد سے آگے لئے جاتا مجھ کو

    ان فضاؤں میں جہاں

    بازگشت اک گیت بن جاتی ہے اس کی

    جیسے سب ٹیلے چٹانیں اور کہستاں

    سانس کے چشمے میں شامل ہیں

    دھڑکتے ذی نفس اور ہم نوا

    مأخذ :
    • کتاب : Silsila-e-makalmat (Pg. 41)
    • Author : Shafique Fatma Shora
    • مطبع : Educational Publishing House (2006)
    • اشاعت : 2006

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY