بند ہو جائے مری آنکھ اگر

صوفی تبسم

بند ہو جائے مری آنکھ اگر

صوفی تبسم

MORE BYصوفی تبسم

    بند ہو جائے مری آنکھ اگر

    اس دریچے کو کھلا رہنے دو

    یہ دریچہ ہے افق آئینہ

    اس میں رقصاں ہیں جہاں کے منظر

    اس دریچے کو کھلا رہنے دو

    اس دریچے سے ابھرتی دیکھی

    چاند کی شام

    ستاروں کی سحر

    اس دریچے کو کھلا رہنے دو

    اس دریچے سے کیے ہیں میں نے

    کئی بے چشم نظارے

    کئی بے راہ سفر

    اس دریچے کو کھلا رہنے دو

    یہ دریچہ ہے مری شوق کا چاک داماں

    مری بد نام نگاہیں، مری رسوا آنکھیں

    یہ دریچہ ہے مری تشنہ نظر

    بند ہو جائے مری آنکھ اگر

    اس دریچے کو کھلا رہنے دو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    بند ہو جائے مری آنکھ اگر نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY