چھٹا آدمی

شاذ تمکنت

چھٹا آدمی

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    یہ مرا شہر ہے

    خوبصورت حسیں

    چاندنی کا نگر دھوپ کی سرزمیں

    شہر کے روز و شب میری آنکھیں

    جس طرح پتلیاں اور سفیدی

    میں ان آنکھوں سے سب منظر رنگ و بو دیکھتا ہوں

    راستہ راستہ کو بہ کو دیکھتا ہوں

    میں کہ شب گرد شاعر

    چاند سے باتیں کرتے ہوئے چل پڑا تھا

    ایک بستی ملی

    ملگجے اور سیہ جھونپڑے چار سو

    جھونپڑے جن کی شمعوں میں سانسیں نہ تھیں

    زرد بیمار اجالے

    راکھ اور گندگی

    اک عفونت کا انبار

    زندگی جیسے شرما رہی تھی

    مری جانب کہیں دور سے ایک سایہ بڑھا

    میں نے پوچھا کہ تم کون ہو

    وہ یہ کہنے لگا

    میں کہ ظلمت ہوں تم روشنی دو مجھے

    میں جہالت ہوں تم آگہی دو مجھے

    میں نجاست ہوں پاکیزگی دو مجھے

    لو سنو اور دیکھو مجھے

    میں چھٹا آدمی ہوں بچا لو مجھے

    میں چھٹا آدمی ہوں بچا لو مجھے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY