چڑیا کے بچے

اسماعیل میرٹھی

چڑیا کے بچے

اسماعیل میرٹھی

MORE BYاسماعیل میرٹھی

    دو تین چھوٹے بچے چڑیا کے گھونسلے میں

    چپ چاپ لگ رہے ہیں سینے سے اپنی ماں کے

    چڑیا نے مامتا سے پھیلا کے دونوں بازو

    اپنے پروں کے اندر بچوں کو ڈھک لیا ہے

    اس طرح روزمرہ کرتی ہے ماں حفاظت

    سردی سے اور ہوا سے رکھتی ہے گرم ان کو

    لیکن چڑا گیا ہے چگا تلاش کرنے

    دانہ کہیں کہیں سے پوٹے میں اپنے بھر کر

    جب لائے گا تو بچے منہ کھول دیں گے جھٹ پٹ

    ان کو بھرائے گا وہ ماں اور باپ دونوں

    بچوں کی پرورش میں مصروف ہیں برابر

    اور چھوٹے بچے خوش ہیں تکلیف کچھ نہیں ہے

    اے چھوٹے چھوٹے بچو تم اونچے گھونسلے سے

    ہرگز نہیں گروگے پر اور پرزے اب تک

    نکلے نہیں تمہارے، اس واسطے ابھی تم

    اونچے نہ اڑ سکو گے، ہاں جب تمہارے بازو

    اور پر درست ہوں گے تو دن کی روشنی میں

    سیکھو گے تم بھی اڑنا کرتے پھرو گے چیں چیں

    اڑتے پھرو گے پھر پھر اے چھوٹے بچو لیکن

    کوا بری بلا ہے اس سے خدا بچائے

    مأخذ :
    • کتاب : Bchchaun ke ismail meruthi (Pg. 177)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY