دریائے خوں

شہریار

دریائے خوں

شہریار

MORE BYشہریار

    پانی کی لے پہ گاتا

    اک کشتیٔ ہوا میں

    آیا تھا رات کوئی

    سارے بدن پہ اس کے

    لپٹے ہوئے تھے شعلے

    ہونٹوں سے اوس بوندیں

    پیہم گرا رہا تھا

    سرگوشیوں کے بادل

    چھائے ہوئے تھے ہر سو

    دریائے خوں رگوں میں

    بے تاب ہو رہا تھا

    میں ہو رہا تھا پاگل!

    مآخذ
    • کتاب : azadi ke bad urdu nazm (Pg. 639)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY