دروازہ کھلا رکھنا

ابن انشا

دروازہ کھلا رکھنا

ابن انشا

MORE BYابن انشا

    دل درد کی شدت سے خوں گشتہ و سی پارہ

    اس شہر میں پھرتا ہے اک وحشی و آوارہ

    شاعر ہے کہ عاشق ہے، جوگی ہے کہ بنجارہ

    دروازہ کھلا رکھنا

    سینے سے گھٹا اٹھے آنکھوں سے جھڑی برسے

    پھاگن کا نہیں بادل، جو چار گھڑی برسے

    برکھا ہے یہ بھادوں کی، برسے تو بڑی برسے

    دروازہ کھلا رکھنا

    آنکھوں میں تو اک عالم آنکھوں میں تو دنیا ہے

    ہونٹوں پہ مگر مہریں منہ سے نہیں کہتا ہے

    کس چیز کو کھو بیٹھا کیا ڈھونڈنے نکلا ہے

    دروازہ کھلا رکھنا

    ہاں تھام محبت کی گر تھام سکے ڈوری

    ساجن ہے ترا ساجن اب تجھ سے تو کیا چوری

    یہ جس کی منادی ہے بستی میں تری گوری

    دروازہ کھلا رکھنا

    شکوؤں کو اٹھا رکھنا، آنکھوں کو بچھا رکھنا

    اک شمع دریچے کی چوکھٹ پہ جلا رکھنا

    مایوس نہ پھر جائے، ہاں پاس وفا رکھنا

    دروازہ کھلا رکھنا

    دروازہ کھلا رکھنا

    ویڈیو
    This video is playing from YouTube

    Videos
    This video is playing from YouTube

    ابن انشا

    ابن انشا

    مأخذ :
    • کتاب : Is Basti ke ik Kooche Men
    • کتاب : Is Basti ke ik Kooche Men (Pg. 30)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY

    Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

    GET YOUR FREE PASS
    بولیے