دوراہا

MORE BYمحمد دین تاثیر

    ریل گاڑی یہ گھمسان الٰہی توبہ

    نہ مروت نہ تکلف نہ تبسم نہ ادا

    یوں ہی اک غیر شعوری سی خشونت کا خروش

    بے ارادہ ہے تو کیا غیر شعوری ہے تو کیا

    یہ نئے دور کے احساس غلامی کا ظہور

    انتقامانہ تحکم کی نمود

    اس میں اک اظہار بغاوت بھی تو ہے

    یوں ہی یوں ہی سہی

    اک شائبہ داد شجاعت بھی تو ہے

    چاک تو کرتا ہوں میں اپنا گریباں ہی سہی

    کلبلاتی ہوئی مخلوق کی اس دلدل میں

    سینہ تانے ہوئے کچھ لوگ بڑھے جاتے ہیں

    خوب پھنکارتے پھن پھیلائے

    لوگ وہ لوگ نہیں

    جن کو ٹھکراتے ہوئے جاتے ہیں

    یہ لوگ بڑے صاحب لوگ

    یہ جو حکام ہمارے ہیں یہ حکام نہیں

    جو ہمیں سے ہیں مگر ہم میں نہیں

    یہ جو بندوں کے ہیں آقا مگر آقا کے غلام

    با وفا ہوں تو ہوں بے دام نہیں

    تو دوست کسی کا بھی ستم گر نہ ہوا تھا

    ان پہ دنیا کی ہر اک راہ کشادہ ہے مگر

    آج اک سنگ‌ راں حائل ہے

    کہ اٹھائے نہ اٹھے اور ہلائے نہ ہلے

    دوسرے درجے کے دروازے میں

    ان کے آقاؤں کا اک فرد فرنگی گورا

    باہیں پھیلائے ہوئے راستہ روکے ہے کھڑا

    کون ہوتا ہے حریف مے مرد افگن عشق

    سیٹیاں بجنے لگیں خدمت سرکار بجا لانا ہے

    اور سرکار ہی خود سنگ رہ منزل ہے

    زندگی آ گئی دوراہے پر

    دیر کیوں کرتے ہو بھاگو بھاگو

    دوڑ کر تھرڈ کے ڈربے میں گھسو

    اپنے ہم جنس غلاموں میں ملو

    زندگی آ گئی دوراہے پر

    مآخذ:

    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 46)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY