ایک علامت

مصطفی زیدی

ایک علامت

مصطفی زیدی

MORE BYمصطفی زیدی

    INTERESTING FACT

    (سعادت حسن منٹو کی وفات پر)

    گھاس سے بچ کے چلو ریت کو گلزار کہو

    نرم کلیوں پہ چڑھا دو غم دوراں کے غلاف

    خود کو دل تھام کے مرغان گرفتار کہو

    رات کو اس کے تبسم سے لپٹ کر سو جاؤ

    صبح اٹھو تو اسے شاہد بازار کہو

    ذہن کیا چیز ہے جذبے کی حقیقت کیا ہے

    فرش پر بیٹھ کے تبلیغ کے اشعار کہو

    اسی رفتار سے چلتا ہے جہان گزراں

    انہی قدموں پہ زمانے کے قدم اٹھتے ہیں

    کوئی عینک سے دکھاتا ہے تو ہم دیکھتے ہیں

    کوئی کاندھوں پہ اٹھاتا ہے تو ہم اٹھتے ہیں

    ایک رقاصۂ طناز کی محفل ہے جہاں

    کبھی آتے ہیں بھتیجے کبھی عم اٹھتے ہیں

    کبھی اک گوشۂ تاریک کے ویرانے میں

    کسی جگنو کے چمکنے پہ فغاں ہوتی ہے

    کبھی اس مرحمت خاص کا اندازہ نہیں

    کبھی دو بوند چھلکنے پہ فغاں ہوتی ہے

    کبھی منزل کے تصور سے جگر جلتے ہیں

    کبھی صحرا میں بھٹکنے پہ فغاں ہوتی ہے

    ہم نے اس چور کو سینوں میں دبا رکھا ہے

    ہم اسی چور کے خطرے سے پریشان بھی ہیں

    کون سمجھے گا کہ اس سطح خوش آواز کے بعد

    اسی ٹھہرے ہوئے تالاب میں طوفان بھی ہیں

    بھائی کی آنکھ کے کانٹے پہ نظر ہے سب کی

    دیوتا بھی ہیں اسی بزم میں انسان بھی ہیں

    خط سرطان سے آتی ہے ملر کی آواز

    اور امریکہ کے بازار میں کھو جاتی ہے

    جائس کی فکر نے تعمیر کیا ہے جس کو

    وہ زمیں حسرت معمار میں کھو جاتی ہے

    کبھی منٹو کا قلم بن کے دہکتی ہے حیات

    کبھی سرمائے کی تلوار میں کھو جاتی ہے

    ہر پیمبر پہ ہنسا ہے یہ زمانہ لیکن

    ہر پیمبر نے جھکائی ہے زمانے کی جبیں

    اپنے ہم عصر سے خائف نہ ہو اے وقت کی آنچ

    اس کی مٹی میں ستاروں کا دھواں ہے کہ نہیں

    اسی مٹی سے دمکتی ہے یہ دھرتی ورنہ

    درد یک ساغر غفلت ہے چہ دنیا و چہ دیں

    جسم کے داغ چھپانا تو کوئی بات نہیں

    روح کے زخم سلگتے ہیں پس پردۂ دل

    سر چھپا لیتے ہو تم ریت میں جس کے آگے

    اسی طوفان میں گھر جاتے ہیں لاکھوں ساحل

    ایک راہی جسے احساس نہ حسرت نہ طلب

    اک سفر جس میں نہ منزل نہ سراغ منزل

    اپنی حساس سبک ناک سے رومال ہٹاؤ

    کھاد میں محض تعفن ہی نہیں خیز بھی ہے

    ذوق درکار ہے قطرے کو گہر کرنے میں

    یہ مئے ناب پر اسرار بھی ہے تیز بھی ہے

    کچھ تو ہے وجۂ دل آزاری و آہنگ و ستیز

    ورنہ یہ طبع خوش اخلاق و کم آمیز بھی ہے

    شہر کی تیرہ و تاریک گزر گاہوں میں

    داستاں ہوگی تو منٹو کا قلم لکھے گا

    زیست قانون و فرامین قفس کے آگے

    بے زباں ہوگی تو منٹو کا قلم لکھے گا

    اس شفا خانۂ اخلاق میں نشتر کے قریب

    رگ جاں ہوگی تو منٹو کا قلم لکھے گا

    گوپی ناتھ اور ظفر شاہ کے جیسے کردار

    کتنی گمنامی میں جی لیتے ہیں مر جاتے ہیں

    کس نے ان آنکھوں میں وہ خواب لہکتے دیکھے

    جو اس انسانوں کے جنگل میں بکھر جاتے ہیں

    کس کا آئینہ ہے موذیل کی اس روح کا عکس

    جس میں مریم کے حسیں نقش نکھر جاتے ہیں

    اے نئے عصر کی رگ رگ کو سمجھنے والے

    فہم و ادراک بدی ہیں تو بدی تیری ہے

    چند لمحوں کی خدائی ہے روایات کے ساتھ

    فن کے آدرش کی روح ابدی تیری ہے

    موت یہ صرف سعادت کی ہے منٹو کی نہیں

    یہ شب و روز ترے ہیں یہ صدی تیری ہے

    مآخذ :
    • کتاب : Kulliyat-e-Mustafa Zaidi(Mouj meri sadaf sadaf) (Pg. 54)
    • Author : Mustafa Zaidi
    • مطبع : Alhamd Publications (2011)
    • اشاعت : 2011

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY