ایک اور رات

گلزار

ایک اور رات

گلزار

MORE BY گلزار

    رات چپ چاپ دبے پاؤں چلے جاتی ہے

    رات خاموش ہے روتی نہیں ہنستی بھی نہیں

    کانچ کا نیلا سا گنبد ہے اڑا جاتا ہے

    خالی خالی کوئی بجرا سا بہا جاتا ہے

    چاند کی کرنوں میں وہ روز سا ریشم بھی نہیں

    چاند کی چکنی ڈلی ہے کہ گھلی جاتی ہے

    اور سناٹوں کی اک دھول اڑی جاتی ہے

    کاش اک بار کبھی نیند سے اٹھ کر تم بھی

    ہجر کی راتوں میں یہ دیکھو تو کیا ہوتا ہے

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY