ایک لمبی کافر لڑکی

تبسم کاشمیری

ایک لمبی کافر لڑکی

تبسم کاشمیری

MORE BY تبسم کاشمیری

    وادی کی سب سے لمبی لڑکی کے جسم کے سب مساموں سے

    ریشم سے زیادہ ملائم اور نرم خموشی میں

    گھنٹیوں کی آوازیں آ رہی تھیں

    برکھا کی اس نم زدہ رات میں

    جب اس کے جسم پہ قوس قزح چمکی

    تو گھنٹیاں تیز تیز بجنے لگیں

    مرے کانوں میں آہٹیں آ رہی تھیں

    دھند سے بھی نرم اور ملائم بادلوں کی دبے پاؤں آہٹیں

    وہ جب ریشم کے کچے تاروں سے بنی ہوئی

    رات کے فرش پر لیٹی

    تو قوس قزح اور بھی شوخ اور گرم رنگوں میں ڈھلنے لگی

    وہ سینکڑوں رنگوں سے مرتب شدہ لڑکی

    رات گئے تک گرم رنگوں میں پگھلتی گئی

    صبح ہونے پر سورج کی پہلی کرن

    روزن سے کمرے میں داخل ہوئی

    تو اس کے جسم سے

    رات کی خوابیدہ گھنٹیوں کی آوازیں سن کر

    اور اس کے جسم پہ سوئے ہوئے گرم رنگوں کو دیکھ کر

    ایک دم شرما گئی

    وادی کی سب سے لمبی لڑکی

    دھند سے بھی نرم اور ریشم سے ملائم

    مآخذ:

    • کتاب : Prindey,phool taalab (Pg. 58)

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY