فریاد (فریادی آشنا ہے)

قیصر صدیقی

فریاد (فریادی آشنا ہے)

قیصر صدیقی

MORE BYقیصر صدیقی

    کہاں ہو غالبوؔ، میروؔ نظیروؔ

    کہاں ہو میری زلفوں کے اسیرو

    میری صہبا کے پیمانو، کہاں ہو

    کہاں ہو میرے دیوانو کہاں ہو

    کہاں ہو عالمو مسند نشینو

    مرے خوان عطا کے ریزہ چینو!

    صلہ کچھ تو وفا کا دو کہاں ہو

    کہاں ہو میرے شہزادو کہاں ہو

    کہاں ہو اے مرے در کے گداؤ

    کم از کم اپنی صورت تو دکھاؤ

    کہ میں لاچار ہو کر رہ گئی ہوں

    بہت بیمار ہو کر رہ گئی ہوں

    کہاں ہو اے قلم کارو، جیالو؟

    مجھے کرسی نشینوں سے بچا لو

    یہ مجھ سے دور ہوتے جا رہے ہیں

    بہت مغرور ہوتے جا رہے ہیں

    مری روٹی پہ ہوتا ہے گزارا

    مگر چھوڑا ہے مجھ کو بے سہارا

    صلہ اپنی وفا کا پا چکی ہوں

    میں ان کے گھر سے راندی جا چکی ہوں

    حقیقت ہے کہ میں اس کی امیں ہوں

    یہ گھر میرا ہے لیکن میں نہیں ہوں

    مرے ہی نام سے عہدہ ملا ہے

    مرے صدقے میں ان کا طنطنہ ہے

    مگر یہ مجھ کو کھاتے جا رہے ہیں

    مری ہستی مٹاتے جا رہے ہیں

    سہاگن تھی ابھاگن ہو گئی ہوں

    میں در در کی بھکارن ہو گئی ہوں

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY