فریادات

جگن ناتھ آزاد

فریادات

جگن ناتھ آزاد

MORE BYجگن ناتھ آزاد

    فاصلے کی تو خیر بات ہے اور

    حیدرآباد دل سے دور نہیں

    دلی میں یوں زبان پہ آئی دکن کی بات

    صحرا میں چھیڑ دیوے کوئی جیسے چمن کی بات

    بزم خرد میں چھڑ تو گئی ہے دکن کی بات

    اب عشق لے کے آئے گا دار و رسن کی بات

    اک حسن دکن تھا جو نگاہوں سے نہ چھوٹا

    ہر حسن کو ورنہ بخدا چھوڑ گئے ہم

    آزادؔ ایک پل بھی نہ دل کو سکوں ملا

    رستے میں دکن بھی تھا کہیں لکھنؤ کے بعد

    آزادؔ پھر دکن کا سمندر ہے روبرو

    لے جا دل و نظر کا سفینہ سنبھال کر

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY