ہم زاد

شاذ تمکنت

ہم زاد

شاذ تمکنت

MORE BYشاذ تمکنت

    وہ اک شخص جس کی شباہت سے مجھ کو

    بہت خوار و شرمندہ ہونا پڑا تھا

    قبا روح کی ملگجی ہو گئی تھی

    کئی بار دامن کو دھونا پڑا تھا

    وہ مجھ جیسی آنکھیں جبیں ہونٹ ابرو

    کہ باقی نہ تھا کچھ بھی فرق من و تو

    وہی چال آواز قد رنگ مدھم

    وہی طرز گفتار ٹھہراؤ کم کم

    خدا جانے کیا کیا مشاغل تھے اس کے

    مرے پاس لوگ آئے آ آ کے لوٹے

    کئی مجھ سے الجھے کئی مجھ سے جھگڑے

    میں روتا رہا بے گناہی کا رونا

    مرے جرم پر لوگ تھے قہقہہ زن

    نہ کام آیا اپنی تباہی کا رونا

    وہ ظلمت میں چھپ چھپ کے دن کاٹتا تھا

    میں دن کے اجالے میں مارا گیا تھا

    سنا رات وہ مر گیا کیا غضب ہے

    اسے دفن کر آئے لوگوں کو دیکھو

    میں کم بخت نظروں سے اوجھل ہی کب تھا

    یہ کیا کر دیا ہائے لوگوں کو دیکھو

    RECITATIONS

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    نعمان شوق

    Ham-zad -Shaz Tamkanat نعمان شوق

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY