حکایت دوراںؔ

اویس احمد دوراں

حکایت دوراںؔ

اویس احمد دوراں

MORE BYاویس احمد دوراں

    دلچسپ معلومات

    مطبوعہ:رفتار نو،دربھنگہ1959

    دبلا پتلا نازک دوراںؔ

    شیشہ جیسا نازک دوراںؔ

    غم کی کالی رات کا مارا

    اپنے ہی جذبات کا مارا

    آٹھوں پہر یوں کھویا کھویا

    جیسے گہری سوچ میں ڈوبا

    کم ہنسنا عادت میں داخل

    خاموشی فطرت میں داخل

    شمع کی صورت بزم میں جلنا

    گاہ بھڑکنا گاہ پگھلنا

    ماتھے پر ہر وقت شکن سی

    چہرہ پر آزردہ تھکن سی

    چہرہ سے محرومی ظاہر

    معصومی مظلومی ظاہر

    آنکھیں ہر دم امڈی امڈی

    پلکیں ہر دم بھیگی بھیگی

    کرب آنکھوں میں درد آنکھوں میں

    راہ وفا کی گرد آنکھوں میں

    سہما سہما شام بلا سے

    روٹھا روٹھا اپنے خدا سے

    عقل و خرد سے جی کو چرائے

    پاگل پن سے باز نہ آئے

    جانے دل میں کس کی لگن ہے

    روح میں کس کانٹے کی چبھن ہے

    یہ ہے اپنا دوراںؔ یارو

    الجھا سلجھا دوراںؔ یارو

    لیکن یارو یہی مسافر

    راہ وفا کا دکھی مسافر

    شانوں پر اک بوجھ کو لادے

    راہ طلب میں آگے آگے

    دل میں اک مضبوط ارادہ

    نظروں میں اک روشن جادہ

    غم کی لمبی رات پہ بھاری

    ظلم کا اور ظلمت کا شکاری

    انسانی تہذیب کا قائل

    دنیا کی تعمیر پہ مائل

    سعی پیہم اس کی تمنا

    جگمگ جگمگ اس کا رستہ

    اس کی ساری فکر پریشاں

    انسانی تنظیم کی خواہاں

    نظمیں اس کی جان مقاصد

    روح تمدن شان مقاصد

    صبح پہ شیدا شام پہ عاشق

    اپنے وطن کے نام پہ عاشق

    باتیں ریب و ریا سے خالی

    ہر نقش کردار مثالی

    پیار انساں کا دل میں چھپائے

    درد جہاں سینہ میں بسائے

    دوراںؔ ہے یا روح دوراںؔ

    گریاں گریاں خنداں خنداں

    اس کی دنیا اپنی دنیا

    اس دنیا میں ساری دنیا

    مأخذ :
    • کتاب : Lamhon Ki Aawaz (Pg. 1)
    • Author : Owais Ahmad Dauran
    • مطبع : label litho press Ramna Road Patna-4 (1974)
    • اشاعت : 1974

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY
    بولیے