ہندوستاں

MORE BYآفتاب رئیس پانی پتی

    گو خاک ہو چکا ہے ہندوستاں ہمارا

    پھر بھی ہے کل جہاں میں پلا گراں ہمارا

    منہ تک رہا ہے اب تک سارا جہاں ہمارا

    ہے نام کشوروں میں ورد زباں ہمارا

    زرخیز ہے سراسر یہ گلستاں ہمارا

    ہے طائر طلائی ہندوستاں ہمارا

    بھارت میں دیکھتے تھے ہم صنعتیں جہاں کی

    مشہور تھی جہاں میں کاری گری یہاں کی

    وہ بات ہندیوں نے غیروں کے درمیاں کی

    جس پر جھکی ہے گردن انبوہ سرکشاں کی

    ملتا تھا علم و فن میں ہمسر کہاں ہمارا

    ہے طائر طلائی ہندوستاں ہمارا

    تسلیم کر رہے ہیں اسپین اور جاپاں

    سب مانتے ہیں لوہا جرمن فرانس و یوناں

    امریکہ میں ہے چرچا اس ملک کا نمایاں

    بھارت کی سلطنت پر برطانیہ ہے نازاں

    اونچا ہے آسماں سے یہ آستاں ہمارا

    ہے طائر طلائی ہندوستاں ہمارا

    پربت کی چوٹیاں ہیں درباں ہمارے در کی

    دامن میں جس کے پنہاں کانیں ہیں سیم و زر کی

    گنگ و جمن پہ جس دم صیاد نے نظر کی

    سرسبز وادیوں سے اس کی نظر نہ سر کی

    کیا غیرت ارم ہے یہ بوستاں ہمارا

    ہے طائر طلائی ہندوستاں ہمارا

    پیدا کئے تھے جس نے ارجن کناد گوتم

    آغوش میں پلے تھے جس کی بیاس و بکرم

    گودی میں جس کی کھیلے تھے بھیم رام بھیشم

    جن کے سبب سے اب تک ہے ہندیوں میں دم خم

    وہ ملک بے بدل ہے جنت نشاں ہمارا

    ہے طائر طلائی ہندوستاں ہمارا

    مأخذ :

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY