انّا للٰہ و انّا الیہ راجعون

ستیہ پال آنند

انّا للٰہ و انّا الیہ راجعون

ستیہ پال آنند

MORE BYستیہ پال آنند

    ایک مردہ تھا جسے میں خود اکیلا

    اپنے کندھوں پر اٹھائے

    آج آخر دفن کر کے آ گیا ہوں

    بوجھ بھاری تھا مگر اپنی رہائی کے لیے

    بے حد ضروری تھا کہ اپنے آپ ہی اس کو اٹھاؤں

    اور گھر سے دور جا کر دفن کر دوں

    یہ حقیقت تھی کہ کوئی واہمہ تھا

    پر یہ بدبو دار لاشہ

    صرف مجھ کو ہی نظر آتا تھا، جیسے

    ایک نادیدہ چھلاوا ہو مرے پیچھے لگا ہو

    میرے کنبے کے سبھی افراد اس کی

    ہر جگہ موجودگی سے بے خبر تھے

    صرف میں ہی تھا جسے یہ

    ٹکٹکی باندھے ہوئے بے نور آنکھوں سے ہمیشہ گھورتا تھا

    آج جب میں

    اپنے ماضی کا یہ مردہ دفن کر کے آ گیا ہوں

    کیوں یہ لگتا ہے کہ میرا

    حال بھی جیسے تڑپتا لمحہ لمحہ مر رہا ہو

    اور مستقبل میں جب یہ حال بھی ماضی بنے گا

    مجھ کو پھر اک بار اس مردے کو کندھوں پر اٹھائے

    دفن کرنے کے لیے جانا پڑے گا

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY