عشق آوارہ مزاج

فہمیدہ ریاض

عشق آوارہ مزاج

فہمیدہ ریاض

MORE BYفہمیدہ ریاض

    عشق آوارہ مزاج

    وہ مسافر تو گیا

    نہ کوئی اس کی مہک ہے کہ جو دے اس کا پتہ

    نہ کوئی نقش کف پا

    نہ کوئی اس کا نشاں

    کوئی تلخی بھی تہہ جام نہ چھوڑی اس نے

    زندگی باقی ہے

    ایک سنجیدہ ہنسی

    سوچ سی دل میں بسی

    تیز آئی ہوئی سانس

    ذہن میں تھوڑے سے وقفے سے کھٹکتی ہوئی پھانس

    اور دکھتا ہوا دل

    چوٹ تھی جس پہ لگی

    چوٹ ویسی تو نہیں

    درد باقی تو نہیں

    لاکھ مانے نہ مگر

    کچھ پشیمان سا دل

    یوں بدل جانے پر

    آپ حیران سا دل

    اس کو کیا اپنا پتہ

    یہ ہے انسان کا دل

    کوئی پتھر تو نہیں

    جس پہ مٹتی نہیں پڑ جائے جو اک بار لکیر

    RECITATIONS

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عذرا نقوی

    عشق آوارہ مزاج عذرا نقوی

    مأخذ :
    • کتاب : Muntakhab Shahkar Nazmon Ka Album) (Pg. 329)
    • Author : Munavvar Jameel
    • مطبع : Haji Haneef Printer Lahore (2000)
    • اشاعت : 2000

    Additional information available

    Click on the INTERESTING button to view additional information associated with this sher.

    OKAY

    About this sher

    Lorem ipsum dolor sit amet, consectetur adipiscing elit. Morbi volutpat porttitor tortor, varius dignissim.

    Close

    rare Unpublished content

    This ghazal contains ashaar not published in the public domain. These are marked by a red line on the left.

    OKAY